سورج کی سطح پر گرم ہوائیں - سائنس کی دنیا | سائنس کی دنیا

سورج کی سطح پر گرم ہوائیں

 معازرت۔ ریفریش کریں

 

بہت شدید قسم کے موسم کا شادر و نادر ہی ذکر ملتا ہے،یہاں تک کے برطانیہ میں بھی جہاں پر ہم موسم پر بات چیت کے لیے مشہور ہیں۔ہمارے سروں کے اوپر زمین سے باقاعدگی سے دیو ہیکل سونامی جیسی گیس کی شدید لہریں اور وحشیانہ، سپرسناک ہوائئں ٹکرا رہی ہیں۔اور اس اضافی پرتویواسی موسم کا مجرم ہمارے نظام شمسی کے درمیان میں بیٹھا ہے یعنی کہ ہمارا سورج۔ہمارے سورج کی جانی پہچانی تصویریں جو کہ سادہ،روشن حلقے،سکون سے سیاروں کو مدار میں رکھے ہوے ہے،درحقیقت،سورج ایک اپددری جگہ ہے۔
Coronal Mass Ejections خلائئ موسم کی بہت مشہورکن صورت ہے،جہاں پر سورج وقفے وقفے سے اربوں ٹن گرم گیس اور magnetic field خلا میں بھینکتا ہے۔
سورج اپنی ہوا بھی خود پیدا کرتا ہے،حس کی حدود ہوا کے جھونکوں سے لے کے کر طوفانوں تک ہوتی ہے،یہ اگرچہ ایک بہت بڑے پیمانے پر ہوتا ہے۔یہاں تک کہ اوسط شمسی ہوائیں بھی بہت زیادہ وحشت ناک ہوتی ہے اس کے مقابلے میں جس کا ہم تجربہ کر چکے ہیں۔ان کی رفتار مختلف ہوتی ہے جو کہ 500,000 میل فی گھنٹہ سے شروع ہو کر 2,000,000 میل فی گھنٹہ تک جا پہنچتی ہیں۔
یہ ہوائیں اپنے ساتھ سورج کی فضا کے حصہ لیے پھرتی ہیں۔ملین ڈگری سنٹی گریڈ گرم گیس انتہائئ جوشیلے الکٹرون،پروٹونز اور ایلفا پارٹیکلز پر مشتمل ہوتی ہے۔
ہوائیں سورج کی پھیلی ہوئی سونڈ نما مقناطیسی میدان کے ساتھ اسراع پذیر ہیں جو اس کی گہرائی میں سے نکل کر زمین کو بھی پیچھے چھوڑتی ہوئی نظام شمسی کے کنارے تک جاتی ہیں۔
شمسی ہواہوں کی پیش بینی کرنے میں تاحال کچھ مسائیل درپیش آتے ہیں۔مثال کے طور پر،ہم یہ جانتے ہیں کہ وہ سورج کی فضا میں غالب طور پر تاریک،کم گھنے حصوں میں پیدا ہوتے ہیں جن کو coronal holes کہا جاتا ہے،بہر حال ہم ابھی تک نمایاں زرائع کی نشاندہی کرنے میں ناکام رہے ہیں جو کہ ان شمسی ہواوں کی پیدائیش میں مدد کرتے ہیں۔زیادہ اہم بات یہ کہ ہمارے پاس ایک واضح تشریح نہیں ہے کہ یہ ہوائیں کس طرح گرم اور تیز ہو رہی ہیں۔
Blowin’ in the wind
ایک تحقیق میں جو کہ journal Nature Communications میں شایع ہوئئ ،ہم نےطاقتور مقناطیسی لہروں کی تقشیش کی تھی جن کو Alfvén waves, کہا جاتا ہے۔اور جو کہ ایسے علاقوں میں پایی جاتی ہیں جہان پر شمسی ہوائیں پیدا ہوتی ہیں۔یہ لہریں سورج کی magnetic field کو پرتشدد انداز سے واپس ڈولنے اور ہزاروں میل فی گھنٹا کی رفتار سے آگے کی طرف توانائی منتقل کرتے ہوئے ستارے کے ماحول کے ارد گرد اور باہر خلا میں جانے کی وجہ بنتی ہیں۔
یہ ایک کردار ہے،ایک مقناطیسی توانائی کیریئر کے طور پر جس کا مطلب ہے کہ Alfvén waves اکثر شمسی ہواووں کو دہو ہیکر رفتار دینے کی زمیدار ہوتی ہیں ۔ہم نے یہ پتہ لگایا ہے کہ بعض ضروری شرائط موجود ہوتی ہیں جن سے لہروں کی توانایی چھوٹے پیمانوں میں ٹوٹ جاتی ہے اور کچھ ہوا کو فراہم ہو جاتی ہے۔( جو کہ لہروں کا ذرات کے ساتھ تفاعل ہونے کے بعد ممکن ہوتا ہے) اس کی پیشن گوئئ کئئ عشروں سے جاری ہے مگر اس کا کبھی مشائدہ نہیں کیا گیا۔مستقبل میں Alfvén waves کا مطالعہ یہ بتاے گا کہ وہ کتنی توانائئ شمسی ہواووں کو دیتی ہیں۔اور شائد ہم شمسی ہواووں کی رفتار کی بیش بینی کرنے کے بھی قابل ہو سکیں گے۔
Translated in Urdu By
Muzammil Asavari
Original Writter:
Richard Morton
Leverhulme Trust Fellow in Mathematics at Northumbria University, Newcastle

3004 :اب تک پڑھنے والوں کی کُل تعداد 6 :آج پڑھنے والوں کی تعداد



Written by